Assistance in Crisis ہنگامی حالات میں امداد
Disaster Relief Operation: سیلاب زدگان کیلئے کیمپ کا انعقاد
Flood relief Camp at Muzaffargarh: مظفر گڑھ میں سیلاب متاثرین کی امداد کیمپ
In 1992 the southern Punjab was hit by severe floods which rendered than 500 thousand peoples homeless. OPF on the direction of the than Federal Minister established relief camps for immediate help of the flood affected. 14 truck loads of beddings and eatables were distributed amongst the affected peoples. جنوبی پنجاب کو 1992ء میں شدید سیلاب نے بُری طرح متاثر کیا اور تقریباً پانچ لاکھ افراد بے گھر ہو گئے۔ وفاقی وزیر محنت وافرادی قوّت و سمندر پار پاکستانیز کی ہدایت پر سیلاب زدگان کی فوری دیکھ بھال کیلئے امدادی کیمپ لگائے گئے۔ متاثرین سیلاب میں14ٹرکوں پر مشتمل بسترے اور کھانے کی اشیاء تقسیم کی گئیں۔
Relief Camp at Dadar & Buner: ڈاڈر اور بنیر میں امدادی کیمپ
In 2000 on account of heavy rains in Northern Areas of the country relief operations were carried out in vast area of Dadar, Buner, Balakot, Mahandri and Kohistan. Relief goods consisting of eatables and bedding were distributed amongst the affected families. ہزارہ ڈویژن میں ۲۰۰۰ء ؁ میں شدید بارشوں کے نقصانات کے بعد ڈاڈر، بنیر، بالاکوٹ، ماہاندری اور کوہستان میں امدادی کاروائیاں کی گئیں۔ امدادی کیمپوں میں اشیائے خوردنی اور بسترے سیلاب زدگان میں تقسیم کئے
Earthquake Relief Operations 2005:  ز لزلے 2005  کے بعد امدادی کاروائیاں
A catastrophic earthquake jolted the country on October 08, 2005 which resulted in immense destruction and heavy loss of lives. A relief grant of Rs.01 crore was deposited in the presidents Relief Fund and goods worth Rs.08 million were distributed in affected areas. اکتوبر2005ء کو تاریخ کے بد ترین زلزلے نے پورے ملک کوہلا کر رکھ دیاجس کے نتیجے میں بڑے پیمانے پر اِنسانی جانیں ضائع اور مکانات کی تباہی ہوئی۔ زلزلہ متاثرین کی امداد کیلئے او پی ایف نے ایک کروڑروپیہ صدارتی فنڈ میں جمع کروایا جبکہ80 لاکھ روپے کا امدادی سامان زلزلہ متاثرین میں تقسیم کیا گیا۔
Relief Goods for Internally Displaced Persons (IDPs) due to Military Operation دہشت گردی کے خلاف فوجی آپریشن میں متاثرین کی امداد
On the directive of the Honorable Federal Minister for Overseas Pakistanis & Human Resource Development relief goods were distributed amongst the families of Overseas Pakistanis living in relief camps and host families at District Swabi and Mardan , due to recent military operation in Swat, Buner and Lower Dir. Relief goods (foods & non food items) amounting to Rs.01 million were distributed among 300 IDPs families at UC Shera Ghund, Swabi and District Mardan. او پی ایف نے وفاقی وزیر سمندر پار پاکستانیز کی ہدایت پر سوات میں دہشت گردی کے خلاف جاری آپریشن کے نتیجے میں بے گھر ہونے والے سمندر پار پاکستانیوں کے اہلِ خانہ کی امداد کیلئے اشیاء خوردونوش اور رہائش کیلئے بسترے فراہم کیے۔صوابی میں مقیم سوات، بُنیر اور لوئر دیرسے بے گھر ہونے والے300 خاندانوں میں دس لاکھ روپے کی امدادی اشیاء فراہم کی گئیں۔ متاثرہ خاندان ضلع مردان، صوابی اور شیرا غنڈ یونین کونسل میں عارضی رہائش پذیر تھے۔
Assistance for Displaced People of Gilgit-Baltistan Due To Landslide at Attabad. گلگت بلتستان میں عطا آبا د جھیل کے متاثرین کیلئے امداد
The landslide at the village of Attabad, about 30km (18 miles) north-east of the town of Aliabad, Gilgit-Baltistan occurred during January 2010 that killed 20 and left about 25,000 people stranded when the river was blocked. The landslide caused debris to block the River Hunza, which in turn prevented water from flowing downstream and created what is now referred to as Attabad Lake. Relief goods (Tents) amounting to Rs.0.5 million were distributed among IDPs families. گلگت بلتستان بھی آبادی سے تقریباً ۳۰کلو میٹر دور عطاآباد کے مقام پر 2010ء میں پہاڑی تودہ گرنے سے 20باشندے جاں بحق ہو گئے جبکہ 25,000 افراد دریا کی بندش سے محصور ہو کر رہ گئے۔ پہاڑی تودے کی وجہ سے دریائے ہنزہ کا نیچے کی جانب پانی کا بہاؤ رُک گیااور عطا آبا د جھیل وجود میں آگئی۔ او پی ایف نے پانچ لاکھ روپے مالیت کا امدادی سامان ٹینٹس وغیرہ متاثرین علاقہ میں تقسیم کئے
Flood Relief Operation 2010: سیلاب ۲۰۱۰ء کیلئے او پی ایف کے امدادی کیمپ
OPF launched Relief Operation in the flood affected areas of Pakistan. The main aim of relief efforts initiated by OPF was to provide relief to the families of overseas Pakistanis affected due to floods. OPF had established Relief Camps in Multan, D.G.Khan, Muzaffargarh, Kandhkot and Quetta where flood affectee families were housed. Besides Relief Camps food/non-food items, medicines and items of basic necessity were also distributed amongst the displaced families in Charsadda, Nowshera, Swat and Dera Murad Jamali. An amount of Rs. 08 million had been incurred by OPF on flood relief operation. او پی ایف نے سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں متاثرین کی امداد کیلئے امدادی کاروائیاں کیں۔ جس کا مقصد بیرون ملک مقیم پاکستانیوں کے سیلا ب سے متاثرہ خاندانون کو مطلوبہ امدادفراہم کرنا تھا۔ او پی ایف نے ملتان ، ڈی جی خان، مظفر گڑھ، کند کوٹ اور کوئٹہ میں سیلاب متا ثرین کو رہائشی سہولت فراہم کی۔اس کے علاوہ چارسدہ، نوشہر، سوات اور ڈیرہ مراد جمالی کوئٹہ میں سیلاب متاثرین میں کھانے پینے کی اشیاء ، ادویات اور روزمرہ ضروریات کا سامان بھی تقسیم کیا گیا۔ اس طرح او پی ایف 80 لاکھ سے زائد کی رقم سیلاب متاثرین پر خرچ کی۔
Libya Crisis لیبیا کا بحران
OPF provided inland transportation facility to deserving overseas Pakistanis through buses/train who did not have any source of payment for their onward journey to their hometowns. Consequently, 1870 overseas Pakistanis were provided bus/train tickets by officials deputed at OPF Facilitation Counters at Islamabad, Karachi, Lahore and Peshawar airport for their onward inland travel to destinations in Punjab, Sindh, Khyber Pakhtunkhwa and Azad Jammu & Kashmir. An approximate amount of Rs 1.6 million was spent by OPF on provision of inland transportation facility on need basis. لیبیا میں صدر قذافی کی حکومت کے خاتمے کے بعد محصور ہونے والے پاکستانیوں کو واپس وطن لایا گیا۔ پاکستان کے تمام بین الاقوامی ہوائی اڈوں سے اپنے آبائی علاقوں کی طرف سفر کرنے والے 1870 مستحق سمندر پار پاکستانیوں کو او پی ایف نے بس اور ریلوے کے ٹکٹ فراہم کیئے۔ جن پر 16 لاکھ روپے خرچ ہوئے۔ یہ تمام خدمات بین الاقوامی ہوائی اڈوں اسلام آباد، کراچی، لاہور اور پشاورپر قائم او پی ایف سہولیاتی کاونٹرز پر تعینات عملہ نے واپس آنے والے پاکستانیوں کو فراہم کیں جو اپنے آبائی علاقوں پنجاب، سندھ،خیبر پختونخواہ اور آزاد جموں کشمیر جا رہے تھے۔
Emergency Relief Cell (ERC) – Compensation to Kuwait-Iraq War Affectees.
Overseas Pakistanis Foundation played a major role during Gulf War crisis in 1990. After the gulf war the task of compensation claims of the war affectees was assigned to the OPF by the United Nations Compensation Commission (UNCC). According to an estimated figure about 90,000 Pakistanis including their family members were living in Kuwait at the time of invasion of Kuwait by Iraq in 1990. As a result of Gulf War, more than 60,000 Pakistani expatriates returned to Pakistan from Kuwait/Iraq. At the time of their arrival in Pakistan, camps were established by the OPF at Karachi, Lahore, Quetta and Taftan border to facilitate such war affectees. These affectees were paid cash, amounting to Rs. 6,000/- to each earning member at the time of their arrival to meet in land travel expenses. For this purpose, OPF contributed Rs. 50 millions.
44,538 war affectees filed claims, which were later submitted to UNCC by OPF for further processing and grant of compensation to claimants. Out of these 44,295 claims of category A, B, C, D, E & F were approved amounting to US$ 314.792 million and OPF distributed amount of US$ 312.812 million to the Gulf war affectees by conversion in to Pakistani rupees.
Subsequently, 2067 late claims were submitted to UNCC, against which 830 Claims of category A&C were approved and an amount of US$ 12.71 million was received, out of which equivalent amount of US$ 12.06 million has been disbursed to 778 claimants.
The role played by OPF in this regard was highly appreciated by the UNCC authorities.
اوپی ا یف نے 1990 میں خلیج کی جنگ کے دوران انتہائی اہم کردار ادا کیا، جنگ کے خاتمے کے بعد اقوام متحدہ معاوضہ کمیشن نے متاثرین کویت عراق جنگ کے نقصانات کے کلیم جمع کرنے کی ذمہ داری سونپی ایک اندازے کے مطابق 1990 میں کویت میں عراقی مداخلت کی وجہ سے 90ہزار پاکستانی وطن واپس آئے جن میں اُن کے خاندان کے افراد بھی شامل تھے۔ جنگ کے نتیجے میں 60 ہزار پاکستانیوں کو اوپی ایف کے قائم کردہ کراچی،لاہور،کوئٹہ اور تافتان بارڈر پر او۔پی۔ایف کی طرف سے سہولیات فراہم کی گئیں، اور فی خاندان کو 6000/-روپے اندرون ملک سفری ضروریات کے لئے دےئے گئے۔ اس ضمن میں اوپی ایف نے پانچ کروڑ روپے خرچ کئے۔ اوپی ایف نے 44358 متاثرین کویت عراق کے معاوضہ فارمز جمع کئے جنہیں بعد ازاں اقوام متحدہ معاوضہ کمیشن کو بھجوایا گیا، جن میں سے 44295 معاوضہ کلیمز منظور کئے گئے، معاوضہ کلیمز کیٹگری میں کیٹگری اے،سی،ڈی،ای اور کیٹگری ایف کے کلیمز شامل تھے۔ مذکورہ معاوضہ کلیمز کی رقوم مالیتی 314.792 ملین ڈالرز منظور کی گئی اوپی ایف نے 312.812 ملین ڈالرز کی رقوم متعلقہ متاثرین میں تقسیم کی گئیں، یہ رقوم پاکستانی روپے میں تبدیل کر کے ادا کی گئی۔ بعد ازاں 2003 میں او۔پی۔ایف نے ایک بار پھر 2067 کلیم فارمز اقوام متحدہ معاوضہ کمیشن کو بھجوائے جن میں سے 830 کلیم فارمز کیٹگری اے اور سی کے منظور کئے گئے، منظور کردہ فارمز کے کلیم کی کُل مالیتی رقم12.71 ملین ڈالرز اوپی ا یف کو وصول ہوئی جس میں سے12.06 ملین ڈالرز778 کلیمز دھندگان میں تقسیم کی گئی۔ اقوام متحدہ معاوضہ کمیشن نے اوپی ایف کے اس کردار کو سراہا ہے۔
Copyright © 2010 www.opf.org.pk All Rights Reserved.